کراچی: شہر قائد میں اومی کراؤن کے مزید 8 مشتبہ کیسز سامنے آئے ہیں۔
محکمہ صحت سندھ کے ذرائع کے مطابق کراچی میں کورونا وائرس کے مختلف قسم کے اومی کرون کے آٹھ نئے مشتبہ کیسز سامنے آئے ہیں۔
محکمہ صحت سندھ کے ذرائع کے مطابق مسافروں کے نمونے جینوم اسکیننگ کے لیے نجی سہولت میں منتقل کردیئے گئے ہیں اور تمام 8 مسافروں کو کورنگی اسپتال نمبر 5 میں قرنطینہ کیا گیا ہے۔
ایئرپورٹ حکام کے مطابق سعودی عرب سے کراچی پہنچنے والے آٹھ افراد میں کورونا وائرس کی تشخیص ہوئی ہے۔ مسافروں کو کورنگی کے سندھ گورنمنٹ اسپتال میں قرنطینہ کر دیا گیا ہے۔
کورونا وائرس کی ایک نئی شکل اومیکرون کا پہلا کیس 9 دسمبر کو پاکستان میں رپورٹ ہوا تھا اور اس کی تصدیق نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ (این آئی ایچ) نے کی تھی، جبکہ اومیکرون کے مزید چھ کیسز کل رپورٹ ہوئے تھے۔

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران، پاکستان میں نئے کورونا وائرس سے 14 افراد جاں بحق ہوئے، جس سے تصدیق شدہ مثبت کیسز کی کل تعداد 1,290,491 ہوگئی۔ جمعے کو امریکا میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 28,863 ہوگئی تھی۔
نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی طرف سے جاری کردہ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق، گزشتہ 24 گھنٹوں میں، 277 افراد نے کورونا کے لیے مثبت تجربہ کیا ہے۔
گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران، پاکستان نے 41,927 ٹیسٹ کیے ہیں، جن میں سے 277 افراد اس بیماری کے لیے مثبت آئے ہیں۔ اس تحقیق میں کووڈ مثبتیت کا تناسب 0.66 فیصد تھا۔

کراچی میں کورونا وائرس کے شدید تغیرات والے اومی کرون کے پہلے کیس کی تصدیق کے بعد محکمہ صحت نے شہر قائد کے دو حصوں میں مائیکرو سمارٹ لاک ڈاؤن نافذ کر دیا ہے۔
جنوبی افریقی اسٹرین اومی کرون میں کورونا کے پہلے مریض کی تصدیق کے بعد کراچی کے سولجر بازار اور رحیم فلیٹ کے اطراف مائیکرو ویو اور لاک ڈاؤن کر دیا گیا ہے۔
محکمہ صحت سندھ کے مطابق اومی کرون کے شکار کے گھر میں مائیکروفون اور لاک ڈاؤن لگا دیا گیا ہے۔
پاکستان میں اومی کرون کے پہلے کیس کی تصدیق گزشتہ روز نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ نے کی تھی جب کہ اومی کرون کا پہلا کیس گزشتہ ہفتے مشتبہ تھا۔
وائرس کی شناخت جینوم سیکونک کے ذریعے کی گئی جب مشتبہ کیس کے نمونے این آئی ایچ کو بھیجے گئے۔

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران، پاکستان میں نئے کورونا وائرس سے 9 اموات ریکارڈ کی گئیں، جس کے بعد مثبت کیسز کی مجموعی تعداد 1,285,254 ہوگئی۔ بدھ کو امریکہ میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 28,737 تک پہنچ گئی۔
نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے مطابق، گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران، 414 افراد نے COVID-19 کے لیے مثبت تجربہ کیا۔
سب سے زیادہ اموات کے ساتھ پنجاب بدستور صوبہ ہے، اس کے بعد سندھ اور خیبرپختونخوا ہیں۔
اس وباء نے پنجاب میں 13,027، سندھ میں 7,621، کے پی میں 5,846، اسلام آباد میں 955، آزاد کشمیر میں 742، بلوچستان میں 360، اور برطانیہ میں 186 افراد کی جانیں لے لی ہیں۔
اس کے علاوہ سندھ میں 4 لاکھ 75 ہزار 820 اور پنجاب میں 4 لاکھ 43 ہزار 185 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔ خیبرپختونخوا میں 180,075، اسلام آباد میں 107,722 اور آزاد کشمیر میں 34,556 لوگ رہتے ہیں۔ بلوچستان میں 33,484 اور گلگت بلتستان میں 10,412 افراد ہیں۔
پاکستان میں اب تک 22,028,156 بار کورونا وائرس کے ٹیسٹ کیے گئے ہیں، گزشتہ 24 گھنٹوں میں 42,381 کے ساتھ۔ ملک میں 1,242,354 افراد صحت یاب ہو چکے ہیں جبکہ 896 کی حالت تشویشناک ہے۔
COVID-19 کا مثبت تناسب 0.97 فیصد تھا۔
اب تک، 80,284,860 افراد کو کورونا وائرس کی ویکسین کی پہلی خوراک مل چکی ہے، جن میں سے 247,548 افراد کو گزشتہ 24 گھنٹوں میں پہلی خوراک ملی ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں، 229,518 رہائشیوں نے اپنا دوسرا شاٹ حاصل کیا، جس سے شہریوں کی کل تعداد 50,184,100 تک پہنچ گئی۔
دی گئی خوراکوں کی کل تعداد اب 123,032,063 ہے اور پچھلے 24 گھنٹوں میں 470,585 ہے۔

پاکستان میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران نئے کورونا وائرس سے 7 اموات ریکارڈ کی گئیں جس کے بعد مثبت کیسز کی مجموعی تعداد 1,284,365 ہوگئی۔ پیر کو امریکہ میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 28,718 ہو گئی تھی۔
نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی طرف سے جاری کردہ تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق، گزشتہ 24 گھنٹوں میں، 176 افراد نے COVID-19 کے لیے مثبت تجربہ کیا۔
گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران، پاکستان نے 29,530 ٹیسٹ کیے ہیں، جن میں سے 176 افراد میں اس بیماری کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے۔ اس تحقیق میں کووڈ مثبتیت کا تناسب 0.59 فیصد تھا۔

لاہور: محکمہ صحت پنجاب نے بدھ کو لاہور ہائی کورٹ کو بتایا کہ صوبے میں ڈینگی وائرس کے 19,595 تصدیق شدہ مریض ہیں، جن میں سے 81 اموات ہوئی ہیں۔
بار کے رکن اظہر صدیق کی جانب سے دائر درخواست کی سماعت، جس میں ڈینگی کے مرض سے نمٹنے میں حکومت کی ناکامی پر سوال اٹھایا گیا، سماعت 14 نومبر تک ملتوی کر دی گئی۔
محکمہ کی رپورٹ کے مطابق صوبے میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ڈینگی بخار کے 501 نئے کیسز رجسٹرڈ ہوئے جن میں سے لاہور میں 380 کیسز سامنے آئے۔
صوبے بھر کے ہسپتالوں میں کل 2106 مریض داخل کیے گئے جن میں سے 1438 لاہور میں ہیں جن میں سے کم از کم 62 کی حالت تشویشناک ہے۔
رپورٹ کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں میں صوبے میں 10044 ہاٹ سپاٹ چیک کیے گئے، جن میں گودام، پلانٹ نرسری، قبرستان، اسکول، ورکشاپس، مساجد، کباڑ خانے اور ٹائر شاپس شامل ہیں۔
رپورٹ کے مطابق پنجاب کے سرکاری ہسپتالوں میں ڈینگی وارڈز میں بستروں کی مجموعی گنجائش 5523 میں سے 2106 تھی۔